Poetry

Dil jhalakta tha jin ky chehray say | Azeem Kamil

Spread the love

دل جھلکتا تھا جِن کے چہرے سے

اب کہاں ہیں وہ لوگ پہلے سے

Dil jhalakta tha jin ky chehray say

Ab kahan hain woh loog pehly say ..

مُسکراتی ہی اچھی لگتی ہو

یہ اُداسی ہٹاؤ چہرے سے ۔۔۔

Muskurati hi Achi lagti ho

Ye udaasi hatao chehray say ..

ملنے آؤں گا تجھ سے گھر تیرے

اب میں ڈرتا نہیں ہوں پہرے سے

Milnay Aaon ga tujh sy ghar teray

Ab main darta nhi hun pehray say ..

تم جہاں روز چومتی ہو مجھے

پڑ گئے ہیں نشان گہرے سے

Tum jahan Rooz chomti ho mujhy

Par gaye hen nishaan gehray say …

تو جہاں سے بھی آتی جاتی ہے

پھول چُنتا ہوں تیرے رستے سے

Tu jahan say bhi Aati jaati hay

Phool chunta hun teray rastay say ..

یہ تسلّی ہے اور بھروسہ بھی

رزق بڑھتا ہے یار سجدے سے

Yeh tasalli hay , aur bharosa bhi

Rizk barhta hay yaar Sajday say..

اِتنا اچھا نہ بن مرے آگے

جانتا ہوں میں تجھ کو اچھے سے ۔۔

Itna acha na ban mray Aagay

Jaanta hun main tujh ko achay say..

عظیم کامل

Azeem Kamil

Also read : Woh jo dunia’a main Aasra hy mra | Azeem Kamil

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *