Poetry

Bagh mein jab wo aya karte thay | Azeem Kamil

Spread the love

باغ میں جب وہ آیا کرتے تھے

پھول رستہ بنایا کرتے تھے

تم بھی غیروں سے جا ملے ہو دوست

تم تو قسمیں اٹھایا کرتے تھے

یاد ہے اک زمانہ بیت گیا

مجھ کو سب سے چھپایا کرتے تھے

وہ بھی دن تھے کے شرم کے مارے

نین مجھ سے چرایا کرتے تھے

جب بچھڑنے پہ بات آتی تھی

مجھ کو رو کر منایا کرتے تھے

اب تو صدیاں گزر گئیں دیکھے

روز ہم کو ستایا کرتے تھے

بس وہی لمس چاہیے کامل

جب گلے سے لگایا کرتے تھے

عظیم کامل ….

Also read : Ishq mein dil Dhamal Dale ga | Azeem Kamil

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *