Poetry

Mosam e gul khub kam aya hoa hai | Muzammil Abbas Shajar

Spread the love

موسمِ گل خوب کام آیا ہوا ہے
ہاتھ ہمارے بھی جام آیا ہوا ہے
رند بلا نوش سے نہ شیخ الجھنا
جوشِ جنوں زیرِ گام آیا ہوا ہے
عشق میں معشوق بادشاہ کی صورت
یوں ہی سہی آ غلام آیا ہوا ہے
دعوتِ دل کش تری نگاہ کے تیور
موج میں دل کا نظام آیا ہوا ہے
چلنا جو چاہوں سفر رکے ہے مرا کیوں
جانے یہ کیسا قیام آیا ہوا ہے
ہاں جو کھٹکتے ہوا کو ہیں وہ دیوں میں
سنتے ہیں اپنا بھی نام آیا ہوا ہے
جانے کو ہے اب شجر یہ زیست کا موسم
زرد رتوں کا پیام آیا ہوا ہے
مزمل عباس شجرؔ

Mosam e gul khub kam aya hoa hai
Hath Hamary bhee jam aya hoa hai
Rind bala nosh sy na shaikh ulajhna
Josh e junoo zair e gam aya hoa hai
Ishq men mashoq badshah ki sorat
Yun hi sahi aa ghulam aya hoa hai
Dawat e dil kash tere nigah k tever
Moj men dil ka nizam aya hoa hai
Chalna jo chahu safar rukay hai mera q
Jany ye kesa qayam aya hoa hai
Haan jo khatak ty hawa ko hen wo diyoo men
Sunty hen apna b nam aya hoa hai
Jany ko hai ab shajar ye zeest ka mosam
Zard rutoo ka pyam aya hoa hai
Muzammil Abbas Shajar

Related Articles