Poetry

پہلے بھی یہاں لائے گئے ہیں کئی غاصب | Muzammil Abbas Shajar

Spread the love

پہلے بھی یہاں لائے گئے ہیں کئی غاصب
وہ ہی کہ سدا جن پہ تبرا ہوا واجب
کس منہ سے شفاعت کے طلبگار بنو گے
جو توڑ نہ پائے یہاں توہین کے قالب
ناموسِ رسالتؐ کا تحفظ ہے عبادت
ہے یاد ہمیں آپؑ کی سنت ابوطالبؑ
جو دوست کے ہیں دوست تمہیں غیر لگے، سو
دشمن کے ہیں جو دوست وہ تم پر ہوئے غالب
جو ظلم پہ راضی ہو وہ ظالم ہے یقینا
سو اپنی طرفداری ہے مظلوم کی جانب
وہ اہلِ ہنر اب کہ قلم توڑ چکے کیا۔۔ ؟
جو صرف حسیناوں کی مدحت کے تھے طالب
شاعر ہوں مِرا دین محبت ہے محبت
مظلوم کی آواز بنوں گا میں تو صاحب
مزمل عباس شجرؔ

Also read : Mosam e gul khub kam aya hoa hai | Muzammil Abbas Shajar

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *