Poetry

ہم کہاں اور تم کہاں جاناں

Hum Kahan Aur Tum Kahan Janaan

Spread the love

ہم کہاں اور تم کہاں جاناں

ہیں کئی ہجر درمیاں جاناں

رائیگاں وصل میں بھی وقت ہوا

پر ہوا خوب رائیگاں جاناں

میرے اندر ہی تو کہیں غم ہے

کس سے پوچھوں ترا نشاں جاناں

عالم بیکران رنگ ہے تو

تجھ میں ٹھہروں کہاں جاناں

میں ہواؤں سے کیسے پیش آؤں

یہی موسم ہے کیا وہاں جاناں

روشنی بھر گئی نگاہوں میں

ہو گئے خواب بے اماں جاناں

درد مندان کوۓ دل داری

گئے غارت جہاں تہاں جاناں

اب بھی جھیلوں میں عکس پڑتے ہیں

اب بھی نیلا ہے آسماں جاناں

ہے جو پرکھوں تمہارا عکس خیال

زخم آئے کہاں جاناں

ALSO READ:
دل نے وفا کے نام پر کار وفا نہیں کیا

دل کی ہر بات دھیان میں گزری

ابھی فرمان آیا ہے وہاں سے

ہم جی رہے ہیں کوئی بہانہ کیے بغیر

جو گزاری نہ جاسکی ہم سے

تو بھی چپ ہے میں بھی چپ ہوں یہ کیسی تنہائی ہے

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *