Poetry

ہم کو اُلو نہیں بناؤ گے

بھول جانا ہے بھول جاؤ گے

Spread the love

ہم کو اُلو نہیں بناؤ گے
بھول جانا ہے بھول جاؤ گے

دھوکہ ہر رنگ میں ہی دھوکہ ہے
اب کہانی کِسے سناؤ گے

تم حقیقت پسند ہو جاؤ
اِس طرح اور خیر پاؤ گے

ایک وعدہ کرو ، کروگے نا ؟
ٹھیک سے آج مسکراؤ گے

ہوسکے تو گلے لگاؤ ہمیں
اور کتنا ہمیں ستاؤ گے

وعدہ کر لو کہ جیسے آج ہو تم
ہر جنم دن یونہی مناؤ گے

پھول ایسے نہیں کریں گے عطا
تم زرا اور مسکراؤ گے

اہلِ کوفہ سے اِتنا پوچھنا تھا
تم سفارش کہاں سے لاؤ گے

ہم زباں توڑتے نہیں کامل
خیر چاہی ہے خیر پاؤ گے

Ham ko ollu nahi banao gay
Bhol jana he bhol jao gay

Dhoka har rang me hi Dhoka he
Ab kahani kisey sunao gay

Tum Haqeeqat pasnd ho jao
Es Trah aur khaier pao gay

Aik wada kro, kro gay na?
Thek se aj Muskrao gay

Ho skay to Galy lgao hamien
Aur kitna hamien Stao gay

Wada kr lo ke jesy Aj ho tum
Har janam din younhi’ Manao gay

Phool Aesey nahi krengy Ata
Tum zra aur Muskrao gay

Ehl e qofa se itna pochna tha
Tum sifarish kaha se Lao gay

Ham zaba’n torte nahi Kamil’
Khaier chahi he khaier pao gay

Azeem Kamil

ALSO READ:
ساقیا ایک نظر جام سے پہلے پہلے

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *