Poetry

Tere Ishq ki Inteha Chata houn

ترے عشق کی انتہا چاہتا ہوں

Spread the love

ترے عشق کی انتہا چاہتا ہوں
مری سادگی دیکھ کیا چاہتا ہوں

ستم ہو کہ ہو وعدۂ بے حجابی
کوئی بات صبر آزما چاہتا ہوں

یہ جنت مبارک رہے زاہدوں کو
کہ میں آپ کا سامنا چاہتا ہوں

ذرا سا تو دل ہوں مگر شوخ اتنا
وہی لن ترانی سنا چاہتا ہوں

کوئی دم کا مہماں ہوں اے اہل محفل
چراغ سحر ہوں بجھا چاہتا ہوں

بھری بزم میں راز کی بات کہہ دی
بڑا بے ادب ہوں سزا چاہتا ہوں

(اقبال)

ALSO READ:
Sitaron se aagy jahan aur b hai

دل گرفتہ ہی سہی بزم سجا لی جائے یاد جاناں سے کوئی شام نہ خالی جائے

شاہ رخ کیساتھ فلم کی آفر پرگھروالوں کا کیا رد عمل تھا، ماہرہ نے بتادیا

ایسا ہے کہ سب خواب مسلسل نہیں ہوتے

مستقل محرومیوں پر بھی تو دل مانا نہیں

میں تو مقتل میں بھی قسمت کا سکندر نکلا

ہوا کے زور سے پندار بام و در بھی گیا چراغ کو جو بچاتے تھے ان کا گھر بھی گیا

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *