Poetry

ظاہر کي آنکھ سے نہ تماشا کرے کوئي | Allama Iqbal

Allama Iqbal Urdu ghazal

Spread the love

ظاہر کي آنکھ سے نہ تماشا کرے کوئي
ہو ديکھنا تو ديدہء دل وا کرے کوئي

منصور کو ہوا لب گويا پيام موت
اب کيا کسي کے عشق کا دعوي کرے کوئي

ہو ديد کا جو شوق تو آنکھوں کو بند کر
ہے ديکھنا يہي کہ نہ ديکھا کرے کوئي

ميں انتہائے عشق ہوں ، تو انتہائے حسن
ديکھے مجھے کہ تجھ کو تماشا کرے کوئي

عذر آفرين جرم محبت ہے حسن دوست
محشر ميں عذر تازہ نہ پيدا کرے کوئي

چھپتي نہيں ہے يہ نگہ شوق ہم نشيں!
پھر اور کس طرح انھيں ديکھا کر ے کوئي

اڑ بيٹھے کيا سمجھ کے بھلا طور پر کليم
طاقت ہو ديد کي تو تقاضا کرے کوئي

نظارے کو يہ جنبش مژگاں بھي بار ہے
نرگس کي آنکھ سے تجھے ديکھا کرے کوئي

کھل جائيں ، کيا مزے ہيں تمنائے شوق ميں
دو چار دن جو ميري تمنا کرے کوئي

ALSO READ
اک دانش نورانی اک دانش برہانی ہے دانش برہانی حیرت کی فراوانی

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *