Poetry

کيا عشق ايک زندگي مستعار کا کيا عشق پائدار سے ناپائدار کا

Allama Iqbal Urdu ghazal

Spread the love

کيا عشق ايک زندگي مستعار کا
کيا عشق پائدار سے ناپائدار کا

وہ عشق جس کي شمع بجھا دے اجل کي پھونک
اس ميں مزا نہيں تپش و انتظار کا

ميري بساط کيا ہے ، تب و تاب يک نفس
شعلے سے بے محل ہے الجھنا شرار کا

کر پہلے مجھ کو زندگي جاوداں عطا
پھر ذوق و شوق ديکھ دل بے قرار کا

کانٹا وہ دے کہ جس کي کھٹک لازوال ہو
يارب ، وہ درد جس کي کسک لازوال ہو!

ALSO READ:
حادثہ وہ جو ابھی پردۂ افلاک میں ہے عکس اس کا مرے آئینۂ ادراک میں ہے

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *