Poetry

یہ دیر کہن کیا ہے انبار خس و خاشاک

Spread the love

یہ دیر کہن کیا ہے انبار خس و خاشاک

مشکل ہے گزر اس میں بے نالۂ آتش ناک

نخچیر محبت کا قصہ نہیں طولانی

لطف خلش پیکاں آسودگئ فتراک

کھویا گیا جو مطلب ہفتاد و دو ملت میں

سمجھے گا نہ تو جب تک بے رنگ نہ ہو ادراک

اک شرع مسلمانی اک جذب مسلمانی

ہے جذب مسلمانی سر فلک الافلاک

اے رہرو فرزانہ بے جذب مسلمانی

نے راہ عمل پیدا نے شاخ یقیں نمناک

رمزیں ہیں محبت کی گستاخی و بیباکی

ہر شوق نہیں گستاخ ہر جذب نہیں بیباک

فارغ تو نہ بیٹھے گا محشر میں جنوں میرا

یا اپنا گریباں چاک یا دامن یزداں چاک

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *