Poetry

کہوں کيا آرزوئے بے دلي مجھ کو کہاں تک ہے

Spread the love

کہوں کيا آرزوئے بے دلي مجھ کو کہاں تک ہے

مرے بازار کي رونق ہي سودائے زياں تک ہے

وہ مے کش ہوں فروغ مے سے خود گلزار بن جائوں

ہوائے گل فراق ساقي نامہرباں تک ہے

چمن افروز ہے صياد ميري خوشنوائي تک

رہي بجلي کي بے تابي ، سو ميرے آشياں تک ہے

وہ مشت خاک ہوں ، فيض پريشاني سے صحرا ہوں

نہ پوچھو ميري وسعت کي ، زميں سے آ سماں تک ہے

جرس ہوں ، نالہ خوابيدہ ہے ميرے ہر رگ و پے ميں

يہ خاموشي مري وقت رحيل کارواں تک ہے

سکون دل سے سامان کشود کار پيدا کر

کہ عقدہ خاطر گرداب کا آب رواں تک ہے

چمن زار محبت ميں خموشي موت ہے بلبل!

يہاں کي زندگي پابندي رسم فغاں تک ہے

جواني ہے تو ذوق ديد بھي ، لطف تمنا بھي

ہمارے گھر کي آبادي قيام ميہماں تک ہے

زمانے بھر ميں رسوا ہوں مگر اے وائے ناداني!

سمجھتا ہوں کہ ميرا عشق ميرے رازداں تک ہے

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *