Poetry

متاع بے بہا ہے درد و سوز آرزو مندي

Spread the love

متاع بے بہا ہے درد و سوز آرزو مندي

مقام بندگي دے کر نہ لوں شان خداوندي

ترے آزاد بندوں کي نہ يہ دنيا ، نہ وہ دنيا

يہاں مرنے کي پابندي ، وہاں جينے کي پابندي

حجاب اکسير ہے آوارہ کوئے محبت کو

ميري آتش کو بھڑکاتي ہے تيري دير پيوندي

گزر اوقات کر ليتا ہے يہ کوہ و بياباں ميں

کہ شاہيں کے ليے ذلت ہے کار آشياں بندي

يہ فيضان نظر تھا يا کہ مکتب کي کرامت تھي

سکھائے کس نے اسمعيل کو آداب فرزندي

زيارت گاہ اہل عزم و ہمت ہے لحد ميري

کہ خاک راہ کو ميں نے بتايا راز الوندي

مري مشاطگي کي کيا ضرورت حسن معني کو

کہ فطرت خود بخود کرتي ہے لالے کي حنا بندي

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *